پاکستان

تحریک انصاف میں نئےبلدیاتی نظام کےمعاملےپراتفاق رائےنہ ہوسکا

تحریک انصاف میں نئےبلدیاتی نظام کےمعاملےپراتفاق رائےنہ ہوسکا

حکمراں جماعت تحریک انصاف کی قیادت کے مابین پنجاب اور خیبر پختونخوا میں نئے بلدیاتی نظام کے معاملے پر اتفاق رائے نہ ہوسکا، وزیراعظم نے ٹاسک فورس کو سفارشات کی حتمی تیاری کیلئے ایک ہفتے کی مزید مہلت دے دی۔
بنی گالا میں وزیراعظم عمران خان کی صدارت میں ہونے والے اجلاس میں پارٹی رہنماؤں سمیت دونوں صوبائی حکومتوں کے ارکان موجود تھے۔ اجلاس میں ٹاسک فورس کے ممبران بلدیاتی نظام کے یونٹس اور اس کے انتخابات کے طریقہ کار پر متفق نہ ہو سکے۔ بعض ممبران کی رائے تھی نئے بلدیاتی نظام میں گاؤں کی کونسل کے دائرے میں 2 سے 6 ہزار آبادی ہونی چاہیے جبکہ دیگر کا خیال تھا کہ 20 سے 25 ہزار ہونی چاہیے۔ شرکا کا کہنا تھا کہ پنجاب میں یونین کونسل کا خرچہ 12 ارب روپے ہے، اگر بلدیاتی نظام کو ویلج کونسل میں منتقل کیا تو لاگت 50 ارب ہوسکتی ہے جوکہ موجودہ بجٹ سے 4 فیصد زائد ہے۔ ٹاسک فورسز کے بعض اراکین کا خیال تھا کہ کونسلر کے انتخابات نان پارٹی بیس ہونا چاہیے جبکہ دیگر نے موقف اختیار کیا کہ تحصیل اور ضلع میئر کے انتخابات براہ راست اورپارٹی بیس ہونے چاہیے۔ وزیراطلاعات فواد چوہدری نے بتایا کہ وزیراعظم نے ٹاسک فورس کو سفارشات کی حتمی تیاری کیلئے ایک ہفتے کی مزید مہلت دے دی ہے۔

About the author

Peerzada M Mohin

M Shahbaz Aziz is ...

Leave a Comment

%d bloggers like this: